اپ ڈیٹ: 17 January 2021 - 02:31
جمعرات کو، داعش، کابل میں افغان وائس ایجنسی کی خبر رساں ایجنسی سینٹر خبریں «آواز» کابل میں دہشت گرد ڈال ہدف پر حملہ۔
خبر کا کوڈ: ۵
تاریخ اشاعت: 15:43 - December 31, 2017

دہشت گرد دھماکے کابل، داعش کی کوششیں آزادی سوچ کے ساتھ نمٹنے کے لئےمقدس دفاع نیوز ایجنسی بین الاقوامی رپورٹر رپورٹ کی، 9 گھنٹے اور 50 منٹ میں صبح جمعرات کے روز 28 دسمبر 2017، کیبل میں افغان آواز ایجنسی (ایوا) کے مرکزی دفتر  يہ ایک سائنسی تحقیق کی کانفرنس کا میزبان تھا،ان تینوں کا مقصد دہشت گرد حملہ تھا. ان حملوں کے دوران افغان شہریوں کے 120 سے زائد لوگ، زیادہ تر نوجوان مہمانوں کانفرنس،  شہیدوں اور زخمی ہو گئے.

کابل میں بعض مقامی ذرائع جیسا سنی ہونے کی خبریں آپریشن کے ارد گرد منظر شوٹنگ کی آواز دی ہے.

سب سے پہلے حملے میں ایک خود کش ایجنٹ کی طرف سے باہر کیا گیا ہے اور اگلے حملے شہیدوں اور پہلا حملہ کی منتقلی کے دوران باہر کیا گیا. کچھ قدرت سوچ ہی رہا تھا کہ طالبان اس آپریشن کیا جا، طالبان کے ترجمان ذبیح‌الله مجاہد کسی بھی حملے میں اس گروپ کی شرکت کو مسترد کر دیا ہہ۔ 

بہت سے بیانات کے لئے دہشت گرد طالبان کے ترجمان داعش اس نیوز ایجنسی (گہرا) کے ذریعے تھا جبکہ اس آپریشن کے نفاذ کے لئے ذمہ داری خونی تھا کہ  لیببا۔

یہ آپریشن علاقائی اور عالمی سطح کے ساتھ ایک بہت شدید ردِ عمل ہے ۔ افغانستان کی حکومت ان کارروائیوں کی شدید مذمت کے ساتھ وعدہ کیا تھا "اس دہشت گرد گروہ تباہ ہو جائے کہ.”

بهرامی قاسمی کے لئے وزارت خارجہ اسلامی جمہوریہ کے ترجمان بھی ممتاز کے ساتھ دہشت گردی کی کارروائیوں کی مذمت کی: "کہ سوچ اور صاف ذہن اور اورزان قلم اس ظالم اور انتہائی تشدد، تھے ثقافتی مراکز، معلوماتی اور سوچ پر حملے کی عکاسی کرتا ہے عداوت کی گہرائی اور اظہار رائے کی آزادی، دہشت گردی کے مرتکب افراد کے خلاف نفرت ، علم، فہم اور افغانستان کے عوام کے اتحاد. “

نئے عمل افغانستان کی دارالحکومت میں ایک داعش فوجی ہدف کے خلاف، بلکہ ایک سائنسی تحقیق کانفرنس، یعنی ثقافتی مقصد کے خلاف نہیں ہے ۔ اس بات کی نشاندہی کے لئے ایک اچھا شائبہ سا ہے جو عناصر جو، داعش عراق اور شام سے فرار کے بعد عدم تحفظ کا شکار افغانستان، کسی سے زیادہ فوجی مقصد، روح حق، علم اور انتہا پسندی کے ساتھ سامنا گیری کے طور پر خوفزدہ ہیں تلاش کر رہے ہیں ۔

دوسری طرف، داعش ایک ہی بات تھی کیا کہ عراق، افغانستان، مصر، نائجیریا اور دنیا کے دیگر حصوں کیا گیا تھا ۔ دینی مراکز اور مدارس اور جمع کرنے، ثقافتی مقاصد پر حملے کہ اگرچہ بہت انداکاٹانگ فوجی داعش؛ کمزور ہو مگر ماضی میں، جس کے بعد ایک ہی حکمت عملی، غور کے لیے ایک بہت اہم آپریشنل حکمت عملی ہو رہا ہے ۔

اس مسئلے کا ایک اور حصہ بھی شہر کے لئے خطرہ ہے ۔ افغان دارالحکومت کابل کے ملک کی سلامتی کی علامت کے طور پر کی ہے ۔ دہشت گرد گروپ کے حوالے کرنے کے قابل ہو تو ایک ملک کے دارالحکومت میں کامیاب کارروائیوں کے سلسلے میں ہے کہ کالوں کو کسی حد تک رہا ہے اپنی سلامتی کے دھمکی دی میں قابل ذکر ہیں ۔

داعش، کابل میں یہ عملیہ انجام دینے، کہ یہ افغان دارالحکومت کسی بھی وقت، اور کیبل کے کسی بھی حصے پر دھمکی دی ثابت کرنے کا ارادہ کر، اس کے عناصر کے لئے آسان اور بُری ہدف تکفیری تھا۔

اگرچہ مغربی ذرائع ابلاغ آپریشن، لیکن اس وقت کی موجودگی کے خلاف امریکی حکمت عملی کی مذمت کی ہے کہ داعش میں عراق اور شام اور کیا ایک اچھا شو آج کہ واشنگٹن کی موجودگی کی افواج سٹر كے افغانستان میں اپنی موجودگی کا بہانہ کرنے کے لئے سب سے زیادہ استعمال ہوا تھا اواہد ہے ۔

نوٹ جو داعش کا مغربی سپانسرز اور سے خاص طور پر امریکہ غور، دینا چاہیے تھا کہ اس کی موجودگی میں عراق اور شام مزاحمت کا محور کے ممالک کے درمیان ایک علاقائی تقسیم کی تخلیق کرتا ہے ۔

اس کے ملک افغانستان آپریشن کے خلاف تھا اس صورت میں کہ جاری رکھیں، یہ امکان ہیں کہ باوجود امریکہ کی میں فوج موجودگی، اسلامی مزاحمت کا ایک نیا محور کا حصہ بن چکے ہیں ۔

شام میں تجربے کے ساتھ لڑائی میں داعش فورسز اور ہوججاٹیہ ڈویژن میں بہت اچھی طرح جانتے ہیں کہ افغان مسلمان جنگجوؤں کی طرف سے افغانستان میں اپنی موجودگی برداشت نہیں کیا جائے گا کہ.

پیغام کا اختتام/

آپ کا تبصرہ
نام:
ایمیل:
* رایے:
مقبول خبریں