اپ ڈیٹ: 16 September 2021 - 17:43
نواسہ رسول (ص)، جگر گوشہ بتول، سید الشہدا حضرت امام حسین علیہ السلام کی شہادت تاریخ اسلام کا وہ روشن باب ہے جو اپنی حیثیت کے لحاظ سے منفرد اور بے مثال ہے۔
خبر کا کوڈ: ۴۹۳۵
تاریخ اشاعت: 18:19 - August 14, 2021

حضرت امام حسین (ع) کی شہادت تاریخ اسلام کا روشن، منفرد اور بے مثال باب ہےمقدس دفاع نیوز ایجنسی نے تاریخ اسلام کے حوالے سے نقل کیا ہے کہ نواسہ رسول خدا (ص) ، جگر گوشہ بتول، سید الشہدا حضرت امام حسین علیہ السلام کی شہادت تاریخ اسلام کا وہ روشن باب ہے جو اپنی حیثیت کے لحاظ سے منفرد اور بے مثال ہے، اس کی عظمت آج بھی اسی طرح ہے جس طرح صدیوں پہلے تھی۔

سن 61 ہجری سے لیکر آج تک کئی سلطنتیں تباہ ہوئیں، قومیں نیست و نابود ہوئیں، دنیا کے حالات و واقعات بدلے، دنیا بدلی، مگر شہادت امام حسین علیہ السلام کا تاریخ ساز اور انقلاب انگیز واقعہ جس قدر قدیم ہوتا جاتا ہے اسی قدر اس کی اہمیت بڑھتی جارہی ہے اور اس میں تازگی پیدا ہوتی جارہی ہے۔

حق و صداقت کے علم بردار شرف انسانی کے پاسبان اور حریت فکر کے بے باک مجاہد، تاریخ اسلام کے عظیم ہیرو حضرت امام حسین علیہ السلام  کا یہ عظیم کارنامہ، بے مثال قربانی ہمیں یہ درس دیتی ہے کہ اللہ تعالیٰ کی رضا، خوشنودی حاصل کرنے کے لیے راہ حق میں اپنی جان، مال، عزت و آبرو، آل و اولاد سب کچھ قربان کردینا ہی مومن کا مقصد حیات ہے۔

محرم الحرام کا چاند دیکھتے ہی مسلمانوں کا ذہن ماضی بعید میں جھانکتا ہے جہاں کربلا کے گرم اور تپتے ہوئے میدان کارزار میں نواسہ رسولؐ مٹھی بھر جانثاروں کے ساتھ باطل کے سامنے ڈٹ کر مقابلہ کرتا ہے اور دین اسلام اور شریعت مطہرہ کی بالادستی اپنے نانا پاک (ص)  کے دین کی حفاظت اسلام کے تقدس و بقا کے لیے اپنا سب کچھ قربان کرکے ایسی بے مثل و بے نظیر قربانی پیش کرکے اسلام کو حیات ابدی عطا کی، اپنی اور اپنے خاندان اور جانثاروں کے خون سے شجر اسلام کی آبیاری کرکے اسے سرسبز و شاداب کردیا۔ آپ کی مظلومیت اور اہل بیت رسول (ص)  پر ڈھائے گئے ظلم و مظالم انسانی روح کو تڑپا کر رکھ دیتے ہیں۔

کربلا کے میدان میں سید الشہدا امام حسین علیہ السلام کی اسی عظیم اور بےمثال قربانی کی یاد میں  دنیا بھر کے مسلمان ماہ محرم میں عزاداری کا اہتمام کرتے ہیں۔ آج بھی ہر سال کی طرح کربلا کے مسافروں کی یاد میں دنیا بھر میں لاکھوں مقامات پر چھوٹے بڑے پیمانے پر عزاداری کا سلسلہ جاری ہے۔ محرم الحرام میں شہداء کربلا کو خراج عقیدت پیش کرنے کیلئے مجالس برپا ہوتی ہیں جن میں علماء کرام شہداے کربلا کی عظیم قربانیوں اور فلسفہ شہادت پر روشنی ڈالتے ہیں۔ اس موقع پر گلی کوچوں اور سڑکوں پرحسینی پرچم نصب کئے جاتے ہیں اور کربلا والوں کی پیاس کو یاد کرتے ہوئے سبیلوں کا اہتمام کیا جاتا ہے۔

موت کے سیلاب میں ہر خشک و تر بہہ جائے گا
ہاں مگر نام حسین ابن علی (ع) رہ جائے گا

آپ کا تبصرہ
نام:
ایمیل:
* رایے:
مقبول خبریں